ملبے تلے پیدا ہونے والی بچی کو درجنوں افراد گود لینے کے لیے تیار لیکن ڈاکٹر نے انکار کیوں کردیا؟

شمال مغربی شام میں پیر کو آنے والے زلزلے کے بعد ایک منہدم عمارت کے ملبے تلے پیدا ہونے والی بچی کو گود لینے کی درجنوں افراد نے آفر کی ہے۔

جب انھیں ریسکیو کیا گیا تھا تو وہ اپنی والدہ کے ساتھ نال کے ذریعے جڑی ہوئی تھیں۔ اس بچی کا نام آیا رکھا گیا جس کا مطلب عربی میں معجزہ ہوتا ہے۔

بچی کے والد، چار بہن بھائی اور ایک خالہ بھی زلزلے میں ہلاک ہو گئے ہیں۔ اس خاندان کا تعلق جندیرس سے تھا۔ آیا اس وقت بھی ہسپتال میں داخل ہیں۔

ڈاکٹر حانی معروف ہسپتال میں ان کی دیکھ بھال کر رہی ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ ’جب یہ پیر کو ہمارے پاس آئیں تو ان کی حالت خراب تھی، انھیں چوٹیں اور خراشیں آئی تھیں، ان کا درجہ حرارت بہت کم تھا اور یہ بمشکل سانس لے رہی تھیں‘ تاہم اب آیا کی طبیعت سنبھل گئی ہے۔

آیا کو ریسکیو کیے جانے کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی تھیں۔ فوٹیج میں ایک شخص کو شخص کو تباہ شدہ عمارت کے ملبے سے دوڑتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے اور ان کے ہاتھ میں ایک گرد سے اٹی ہوئی نوزائیدہ بچی ہے۔

خلیل السوادی جو بچی کے دور پرے کے رشتہ دار ہیں نے اس بچی کو شام کے شہر آفرین میں ڈاکٹر معروف تک پہنچایا تھا۔ سوشل میڈیا پر ہزاروں افراد نے اس بچی کو گود لینے کے لیے ان کا پتہ پوچھا ہے۔

ایک شخص نے کہا کہ ’میں اسے گود لینا چاہتا ہوں اور انھیں ایک اچھی زندگی دینا چاہتا ہوں۔‘

ایک کویتی ٹی وی اینکر کا کہنا تھا کہ ’میں اس بچی کی دیکھ بھال کرنے اور انھیں گود لینے کے لیے تیار ہوں۔۔۔ اگر قانون مجھے اس کی اجازت دیتا ہے تو۔‘

ہسپتال کے مینیجر خالد عطیہ نے بتایا ہے کہ اب تک انھیں دنیا بھر سے درجنوں افراد کی کالز آ چکی ہیں جو آیا کہ گود لینا چاہتے ہیں۔

ڈاکٹر خالد جن کی اپنی بیٹی آیا سے صرف چار ماہ بڑی ہے کا کہنا ہے کہ ’ہم کسی کو بھی اسے گود لینے کی اجازت اس وقت تک نہیں دے سکتے جب تک ان کے دور پرے کے رشتہ دار یہاں نہ آ جائیں۔ تب تک میرے ہیں اس کی دیکھ بھال میرے بچوں کی طرح کر ہی کی جائے گی۔‘

جندیرس میں آیا کے اپنے گھر کی عمارت میں لوگ تاحال اپنے پیاروں کو ڈھونڈ رہے ہیں۔

وہاں موجود ایک صحافی محمد ال عدنان نے بی بی سی کو بتایا کہ ’یہاں صورتحال بہت خراب ہے۔ اس وقت ملبے تلے اتنے زیادہ افراد موجود ہیں۔ ایسے متعدد افراد ہیں جو ہم نکالنے میں کامیاب نہیں ہو سکے۔‘

انھوں نے بتایا کہ قصبے کا زیادہ تر حصہ تباہ ہو چکا ہے اور اس دوران زیادہ تر امداد مقامی لوگوں کی طرف سے آئی ہے۔

وائٹ ہیلمٹس تنظیم جو لوگوں کو ملبے کے نیچے سے نکالنے میں مہارت رکھتے ہیں اس کام میں اس وقت بھی جندیرس قصبے میں پیش پیش ہیں۔

وائٹ ہیلمٹس سے منسلک کارکن محمد الکامل نے بتایا کہ ’ریسکیو کرنے والے بھی کبھی کبھار متاثر ہو جاتے ہیں کیونکہ یہ عمارتیں بہت غیر مستحکم ہوتی ہیں۔

وہ کہتے ہیں کہ ’ہم نے ابھی کچھ دیر قبل تین لاشیں اس ملبے سے نکالی ہیں لیکن ہمارا خیال ہے کہ اب بھی ایک فیملی ملبے تلے زندہ ہے، ہم کام جاری رکھیں گے۔‘

شام میں زلزلے کے بعد سے تین ہزار سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ اس تعداد میں وہ لوگ شامل نہیں ہیں جو ملک کے ان حصوں میں رہتے ہیں جہاں اس وقت حکومت مخالف گروہوں کا قبضہ ہے۔

Doctor Ne Inkar Kar Dia

Discover a variety of News articles on our page, including topics like Doctor Ne Inkar Kar Dia and other health issues. Get detailed insights and practical tips for Doctor Ne Inkar Kar Dia to help you on your journey to a healthier life. Our easy-to-read content keeps you informed and empowered as you work towards a better lifestyle.

By Shahzad  |   In News  |   0 Comments   |   1519 Views   |   12 Feb 2023
About the Author:

Shahzad is a content writer with expertise in publishing news articles with strong academic background. Shahzad is dedicated content writer for news and featured content especially food recipes, daily life tips & tricks related topics and currently employed as content writer at kfoods.com.

Related Articles
Top Trending
COMMENTS | ASK QUESTION (Last Updated: 24 February 2024)

ملبے تلے پیدا ہونے والی بچی کو درجنوں افراد گود لینے کے لیے تیار لیکن ڈاکٹر نے انکار کیوں کردیا؟

ملبے تلے پیدا ہونے والی بچی کو درجنوں افراد گود لینے کے لیے تیار لیکن ڈاکٹر نے انکار کیوں کردیا؟ ہر کسی کے لیے جاننا ضروری ہیں کیونکہ یہ ایک اہم معلومات ہے۔ ملبے تلے پیدا ہونے والی بچی کو درجنوں افراد گود لینے کے لیے تیار لیکن ڈاکٹر نے انکار کیوں کردیا؟ سے متعلق تفصیلی معلومات آپ کو اس آرٹیکل میں بآسانی مل جائے گی۔ ہمارے پیج پر کھانوں، مصالحوں، ادویات، بیماریوں، فیشن، سیلیبریٹیز، ٹپس اینڈ ٹرکس، ہربلسٹ اور مشہور شیف کی بتائی ہوئی ہر قسم کی ٹپ دستیاب ہے۔ مزید لائف ٹپس، صحت، قدرتی اجزاء اور ماڈرن ریمیڈی کے فوڈز میں موجود ہے۔