چڑچڑا پن، سردرد اور بے چینی، کام کی زیادتی اور تناؤ خطرناک ہے ۔۔ ڈبلیو ایچ او کی چونکا دینے والی رپورٹ

اپنے آپ کو مصروف رکھنے کے لیے کام بہت ضروری ہے، لیکن جب کام کی زندگی اور ذاتی زندگی میں توازن ختم ہو جائے اور کام کا تناؤ آپ کے گھر تک پہنچنے لگے تو سمجھ لیں کہ آپ کام کے دباؤ سے نبرد آزما ہیں۔ کچھ لوگ ہر روز اپنی نوکری چھوڑنا چاہتے ہیں، کچھ اپنی جگہ بدلنا چاہتے ہیں اور کچھ اپنے باس کا چہرہ دیکھ کر پسینہ بہاتے ہیں۔

نتیجہ یہ ہے کہ ملازمین کام کے دباؤ سے نمٹنے میں زیادہ مصروف ہیں اور اس کے نتیجے میں کمپنیاں کام کھو رہی ہیں کیونکہ اگر آپ کا ملازم کام سے خوش نہیں ہے تو وہ ناراضگی سے کام کرے گا۔ آپ کو وہ نتیجہ کبھی نہیں ملے گا جو آپ چاہتے ہیں۔

اگر آپ کے ملازمین کام سے متعلق تناؤ کا شکار ہیں تو اس بات کو سمجھنا ضروری ہے کہ کام کے دباؤ کی وجہ سے دنیا کو ہر سال ایک لاکھ کروڑ کا نقصان ہو رہا ہے۔ ڈبلیو ایچ او نے حال ہی میں یہ اعداد و شمار مرتب کیے ہیں اور خبردار کیا ہے کہ اگر کارپوریٹ دنیا نے ملازمین کے لیے سازگار ماحول پیدا نہیں کیا تو کمپنیوں کو اپنی بیلنس شیٹ اور اپنی ساکھ دونوں کھونے میں دیر نہیں لگے گی۔

ڈبلیو ایچ او کے اعدادوشمار کے مطابق دنیا کی 60 فیصد آبادی ملازمت پر ہے۔ دنیا بھر میں مجموعی طور پر 100 ملین افراد دماغی صحت کے مسائل کا شکار ہیں اور ان میں سے 15 فیصد محنت کش نوجوان تناؤ کا شکار ہیں۔

ڈبلیو ایچ او کے مطابق، کام کے دباؤ اور کام کے تناؤمیں فرق ہے - کام کا دباؤ کام کا ایک اہم حصہ ہے جو ملازمین کو چوکنا اور متحرک رکھتا ہے، لیکن اگر کام کی تقسیم منصفانہ نہ ہو، تو ہو سکتا ہے کہ باس سمجھنے اور سننے والا نہ ہو، ساتھی کارکنوں کو مناسب تعاون نہیں مل رہا ہو،تو دباؤ کو تناؤ میں بدلنے میں دیر نہیں لگتی۔

کام کے دباؤ کے علامات:

کام پر باس کے ساتھ لڑائی جھگڑے سے بچنا، کام سے واپسی کے بعد بھی چڑچڑاپن محسوس کرنا، گھر والوں پر بلا وجہ غصہ آنا یا چھٹی لینے سے ڈرنا یہ کچھ علامات ہیں جو آپ کو بتاتی ہیں کہ آپ کام کے دباؤ کی بجائے ذہنی دباؤ میں ہیں۔

ایسے میں کیا کرنا چاہئے؟

کمپنیوں کو اپنے ملازمین سے وقتاً فوقتاً بات کرنی چاہیے ۔ بات چیت مسائل کو حل کر سکتی ہے۔
ملازمین دن کا آغاز مثبت سوچ کے ساتھ کریں۔
چھوٹے اہداف طے کریں اور انہیں پورا کریں۔
اپنے دن کا خود انتظام کریں۔
بحث میں نہ پڑیں۔
اپنی صلاحیت کو جانیں اور اس کے مطابق عمل کریں۔
ملٹی ٹاسکنگ سے گریز کریں۔
آپ دوپہر کے کھانے کے بعد ایک مختصر وقفہ لے سکتے ہیں۔
اسٹریچنگ کریں۔
نہیں کہنا سیکھیں - اگر کام واقعی ضرورت سے زیادہ ہے، تو شائستگی سے مسئلہ کو اپنے باس کے ساتھ شیئر کریں۔

Kam Ke Tanao Ko Kese Kam Krain

Discover a variety of Health and Fitness articles on our page, including topics like Kam Ke Tanao Ko Kese Kam Krain and other health issues. Get detailed insights and practical tips for Kam Ke Tanao Ko Kese Kam Krain to help you on your journey to a healthier life. Our easy-to-read content keeps you informed and empowered as you work towards a better lifestyle.

By Afshan  |   In Health and Fitness  |   0 Comments   |   1473 Views   |   17 Oct 2022
About the Author:

Afshan is a content writer with expertise in publishing news articles with strong academic background. Afshan is dedicated content writer for news and featured content especially food recipes, daily life tips & tricks related topics and currently employed as content writer at kfoods.com.

Related Articles
Top Trending
COMMENTS | ASK QUESTION (Last Updated: 15 April 2024)

چڑچڑا پن، سردرد اور بے چینی، کام کی زیادتی اور تناؤ خطرناک ہے ۔۔ ڈبلیو ایچ او کی چونکا دینے والی رپورٹ

چڑچڑا پن، سردرد اور بے چینی، کام کی زیادتی اور تناؤ خطرناک ہے ۔۔ ڈبلیو ایچ او کی چونکا دینے والی رپورٹ ہر کسی کے لیے جاننا ضروری ہیں کیونکہ یہ ایک اہم معلومات ہے۔ چڑچڑا پن، سردرد اور بے چینی، کام کی زیادتی اور تناؤ خطرناک ہے ۔۔ ڈبلیو ایچ او کی چونکا دینے والی رپورٹ سے متعلق تفصیلی معلومات آپ کو اس آرٹیکل میں بآسانی مل جائے گی۔ ہمارے پیج پر کھانوں، مصالحوں، ادویات، بیماریوں، فیشن، سیلیبریٹیز، ٹپس اینڈ ٹرکس، ہربلسٹ اور مشہور شیف کی بتائی ہوئی ہر قسم کی ٹپ دستیاب ہے۔ مزید لائف ٹپس، صحت، قدرتی اجزاء اور ماڈرن ریمیڈی کے فوڈز میں موجود ہے۔