پڑھائی کرو ورنہ کام میں ہاتھ بٹاؤ۔۔ والد کی سختی کے باوجود کرکٹ کی دنیا میں کیسے آئے؟ سب کا دل جیتنے والے عامر جمال کی زندگی کے دلچسپ پہلو

“والد نے کہا تھا کہ یا تو پڑھائی کرو یا پر میرے کام میں ہاتھ بٹاؤ۔ والد صاحب ٹرانسپورٹ کا کاروبار کرتے تھے۔ جب میں نے ان سے کرکٹ کھیلنے کی خواہش کا اظہار کیا تو انھوں نے سختی سے منع کردیا۔ لیکن میرے دماغ پر تو کرکٹ چھائی ہوئی تھی۔“

کھلاڑی کی نجی زندگی

یہ کہنا ہے معروف کھلاڑی عامر جمال کا۔ عامر کا تعلق میانوالی کے گاؤں کلور شریف سے ہے۔ ان کے والد سرایئکی اور والدہ پٹھان ہیں۔ عامر کی عمر 26سال ہے۔ والد کا ٹرانسپورٹ کا کاروبار ہونے کے باوجود عامر کا رجحان کرکٹ کی جانب کیسے ہوا اس کے بارے میں بی بی سی کو انٹرویو دیتے ہوئے انھوں نے بتایا کہ

“2010میں دوستوں کے ساتھ سیر کے لئے اسلام آباد گئے تو انھیں ہارڈ بال نے متوجہ کیا اس سے پہلے وہ میانوالی میں شوقیہ بھی کرکٹ کھیلا کرتے تھے مگر اسلام آباد می انھوں نے ہارڈ بال سے کرکٹ کھیلنی شروع کی۔ والد کی جانب صاف جواب سننے کے بعد وہ اسلام آباد آگئے اور کلب کرکٹ کھیلنا شروع کردیا۔

عامر جمال کا کیریئر

عامر جمال کا باقاعدہ کیریئر 2013 میں شروع ہوا۔ جس کے بعد وہ اتار چڑھاؤ کا شکار رہے مگر مقبولیت انھوں نے حال ہی میں ہونے والے پاکستان اور انگلینڈ کے خلاف ہونے والی سیریز سے حاصل کی جب پہلے اوور میں وکٹ حاصل کر کے دوسری بال پر کھلاڑی سیم کرن کو آؤٹ کیا اور پاکستانیوں کے دل جیت لیے۔

By Khush Bakht  |   In News  |   0 Comments   |   347 Views   |   03 Oct 2022
Related Articles
Top Trending
Comments/Ask Question

Read Blog about پڑھائی کرو ورنہ کام میں ہاتھ بٹاؤ۔۔ والد کی سختی کے باوجود کرکٹ کی دنیا میں کیسے آئے؟ سب کا دل جیتنے والے عامر جمال کی زندگی کے دلچسپ پہلو and health & fitness, step by step recipes, Beauty & skin care and other related topics with sample homemade solution. Here is variety of health benefits, home-based natural remedies. Find (پڑھائی کرو ورنہ کام میں ہاتھ بٹاؤ۔۔ والد کی سختی کے باوجود کرکٹ کی دنیا میں کیسے آئے؟ سب کا دل جیتنے والے عامر جمال کی زندگی کے دلچسپ پہلو) and how to utilize other natural ingredients to cure diseases, easy recipes, and other information related to food from KFoods.